غزل

گردِ راہ کو ہے رہرواں کا دکھ
اور منزل کو کاروواں کا دکھ

کسی آنسو کو نارسائی کا غم
کسی کُوچے کو پاسباں کا دکھ

اپنی نیرنگئ بیاں کی خوشی
ساتھ ہی ان کی داستاں کا دکھ

زیست نامے کے ورقِ سادہ پر
آرزو کے مِٹے نشاں کا دکھ

کوئی مضمون نہ کوئی عنواں
دمِ آخر یہ لوحِ جاں کا دکھ

بھرم رہ جائے چارہ سازی کا
لئے پھرتے ہیں رازداں کا دکھ

اک ستارے نے عمر بھر اے فضا!
تنہا جھیلا ہے آسماں کا دکھ

By Fazaila Ali Qazi
Director Students’ Affairs

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s